کورونا ویکسین کے حوالے سے دس اہم سوالات اور سعودی وزارت صحت کے جوابات جانیے 544

کورونا ویکسین کے حوالے سے دس اہم سوالات اور سعودی وزارت صحت کے جوابات جانیے

کورونا ویکسین کے حوالے سے دس اہم سوالات اور سعودی وزارت صحت کے جوابات جانیے اس رپورٹ میں
سعودی وزارت صحت کے ترجمان ڈاکٹر محمد العبد العالی نے کورونا ویکسین سے متعلق دس اہم سوالا ت کے جواب دیے ہیں۔

عاجل ویب سائٹ کے مطابق العبد العالی نے ٹوئٹر پر وزارت صحت کے سرکاری اکاؤنٹ پر وڈیو کلپ میں سوالات کے جواب دیے ہیں۔
وزارت صحت کا اس سوال پر کہ کیا ویکسین لینے کے بعد شادی ملتوی کرنا ضروری ہے ؟ جواب میں کہا گیا کہ اس کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔

اس سوال پر کہ کیا ویکسین خواتین و مردوں کی افزودگی پر اثر انداز ہوتی ہے؟ جو اب میں کہا کہ اس سے کوئی برا اثر نہیں پڑتا۔
یہ بھی سوال کیا جا رہا ہے کہ کیا ویکسین لینے کے بعد خون کا عطیہ دیا جا سکتا ہے۔ وزارت کا کہنا ہے کہ ویکسین لینے سے کوئی فرق نہیں پڑتا۔ ویکسین لینے کےبعد خون کا عطیہ فورا دیا جاسکتا ہے۔

یہ بھی پوچھا جا رہا ہے کہ کیا ویکسین سے انجماد خون کا عارضہ لاحق ہوجاتا ہے؟۔ وزات کا کہنا ہے کہویکسین لینے سے انجماد خون نہیں ہوتا اور تمام طبی جائزوں سے یہ بات ثابت ہوچکی ہے۔

وزارت صحت کے ٹوئٹر پر پوچھا گیا کہ ویکسین کن صورتوں میں لینا ٹھیک نہیں ہے؟ ۔ جواب میں وزارت صحت نے کہا کہ انتہائی حساسیت الرجی کی صورت میں ویکسین نہ لی جائے۔
اس سوال پر کہ کیا دودھ پلانے والی خواتین ویکسین لے سکتی ہے؟ جو اب میں کہا گیا کہجی ہاں لے سکتی ہی اس کا کوئی نقصان ماں کو ہوتا ہے اور نہ ہی بچے کو۔

ایک اور سوال پر وزارت صحت نے کہا کہ ویکسین سے قبل ٹیسٹ ضروری نہیں ہیں۔
وزارت سے پوچھا گیا ہے کہ کیا سعودی عرب میں ویکسین سے اموات ریکارڈ پر آئی ہیں؟ اس کا جواب نفی میں دیا گیا ہے۔

وزارت کا یہ بھی کہنا ہے کہ ویکسین لینے سے شدید قسم کے سائڈ ایفیکٹس ریکارڈ پر نہیں آئے ہیں۔
ایک او ر سوال پر وزارت نے کہا کہ عمرے اور سفر کے لیے ویکسین ضروری قرار دینے کےحوالے سے تجاویز زیر غور ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں